تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

فراواں

کہہ کے سچ اخبار نے چہرہ گلستاں کردیا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 179
خونِ ناحق کا اِک اِک دھبّہ نمایاں کردیا
کہہ کے سچ اخبار نے چہرہ گلستاں کردیا
سنسنی کی بھیج کر خبریں فضائے دہر نے
خود پرِیشاں تھی ہمیں بھی ہے پرِیشاں کردیا
لمحۂ گزراں نے رُوئے قاتل و دلدار کو
ہاں ہمارے ہی لیے تو، ہے رگِ جاں کردیا
پرسشِ پُرفن سے دل کی تہہ میں جو جو تھا ملال
یارلوگوں نے اُسے رنجِ فراواں کردیا
جیسے کرنیں ہوں دلِ اندوہگیں میں آس کی
جگنوؤں نے رات کو کیا کیا درخشاں کردیا
وسعتِ دشتِ تعلق میں اکیلا چھوڑ کر
کیوں غزالِ جاں کو ہم نے نذرِ گُرگاں کردیا
پوچھتے ہیں مبتدی مجھ سے کہ اے ماجد میاں!
کس طرح تو نے غزل کو ہے دبستاں کردیا
ماجد صدیقی

بادلوں سا ہے میّسر مجھے ذیشاں ہونا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 167
مجتمع ہونا، بہ یک وقت پریشاں ہونا
بادلوں سا ہے میّسر مجھے ذیشاں ہونا
زندگی میں کبھی وہ دن بھی فراہم تھے مجھے
بیٹھنا بِیچ میں بچّوں کے، گُلِستاں ہونا
میں ہوں شہکارِ خدا، میں نہ خدا کہلاؤں
مجھ کو یہ طَور سکھائے مرا انساں ہونا
گاہے گاہے جو سخن میں نہیں حدّت رہتی
طبعِ شاعر کا ہے یہ، مہرِ زمستاں ہونا
زر کہ جو وجہِ بشاشت ہے کہاں اپنا نصیب!
ہے تو قسمت میں فقط، رنجِ فراواں ہونا
وہ کہ ہیں اہلِ وسائل انہیں کھٹکا کس کا
ہے اُنہیں ہیچ غمِ جاں، غمِ جاناں ہونا
گاہے گاہے کی خطا ہے مرا خاصہ ماجد!
اور یہ عظمت ہے مری اس پہ پشیماں ہونا
ماجد صدیقی

چنگاری کو رقصاں دیکھا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 2
اُس کا حسنِ درخشاں دیکھا
چنگاری کو رقصاں دیکھا
تھوڑ ہی تھوڑ رہی خوشیوں کی
رنج ہی رنج فراواں دیکھا
چاند اُسے ہی رگیدنے آیا
جو تارا بھی نمایاں دیکھا
جسم پگھل کے چٹختا لاگے
روح کو جب سے پرِیشاں دیکھا
گل پہ نجانے اوس پڑی کیا
صبح اسے بھی گریاں دیکھا
بام و افق سے ہم نے اکثر
حسن کو آنکھ پہ عریاں دیکھا
وجد سے پھر نکلا نہ وہ جس نے
ماجد! تجھ کو غزلخواں دیکھا
ماجد صدیقی

گرد کے طوفاں

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 23
سانس میں غلطاں
گرد کے طوفاں
مِلک ہے اپنی
رنجِ فراواں
اُڑنے لگا کیوں
رنگِ گُلستاں
ہاتھ ہوا کے
برگ، پَرافشاں
غُنچہ و گُل ہیں
خاک بہ داماں
جبر کا نشتر
نِزدِ رگِ جاں
ہر رُخِ انور
ششدر و حیراں
عمر ہے جیسے
شامِ غریباں
مُزرعۂ ماجِد
دیدۂ گِریاں
ماجد صدیقی

منظر وہ ابھی تم نے مری جاں! نہیں دیکھا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 155
ہوتے ہیں بدن کیسے گلستاں، نہیں دیکھا
منظر وہ ابھی تم نے مری جاں! نہیں دیکھا
ہم صبح ومساجان بہ لب حبسِ چمن سے
اور ہم پہ عتاب اُن کو کہ زنداں نہیں دیکھا
جس شاخ کو تھی راس نہ جنبش بھی ہَوا کی
پھل جب سے لُٹے پھر اُسے لرزاں نہیں دیکھا
چھلکا ہے جو آنکھوں سے شبِ جور میں اب کے
ایسا تو کبھی رنجِ فراواں نہیں دیکھا
مدّاح وہی اُس کے سکوں کا ہے کہ جس نے
مہتاب سرِغرب پر افشاں نہیں دیکھا
جب تک ہے تصّرف میں فضا اُس کے بدن کی
ہم کیوں یہ کہیں تختِ سلیماں نہیں دیکھا
دیوار کے کانوں سے ڈرا لگتا ہے شاید
ماجدؔ کو کئی دن سے غزل خواں نہیں دیکھا
ماجد صدیقی

WordPress.com پر بلاگ.

Up ↑