تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

سرکار

چونکے نہ بعد میں نیا اخبار دیکھ کر

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 187
ٹی وی پہ ننگِ قوّتِ اظہار دیکھ کر
چونکے نہ بعد میں نیا اخبار دیکھ کر
لمحوں میں جیسے موسم گُل ہم پہ چھا گیا
ہم کِھل اُٹھے گُلاب سے وہ یار دیکھ کر
قبل از سزائے مرگ ہی جاں سے گزر گئے
ہم اپنے ہاں کے عدل کا معیار دیکھ کر
اغیار کی کمک پہ ہیں کیا کیا اُچھل رہے
حکّام، کامیابیٔ سرکار دیکھ کر
تڑپے بہت کہ جس نے ہمیں دی حیاتِ نَو
رہبر وہ رشکِ خضر، سرِدار دیکھ کر
لگنے لگا ہے وہ بھی ضرورت کی کوئی شے
گھرگھر میں خلقِ ہِند کے اوتار دیکھ کر
چاہوں یہ میں رہیں نہ یہ دھاگے الگ الگ
تسبیح ہاتھ میں، کہیں زُنّار دیکھ کر
گر سن سکے تو سن مرے دل کے جہازراں؟
’لرزے ہے موج مَے تری رفتار دیکھ کر،
پہنچے نہ کوئی دیوتا اصلِ گناہ تک
دھتکارتا ہے وہ بھی گنہگار دیکھ کر
ہر حکمراں فروغِ جہالت پہ خوش رہے
اُلّو بھی مطمئن ہے شبِ تار دیکھ کر
قامت کا ملک ملک کی، تُم ناپ دیکھنا
طُرّہ ملے ہے آہنی ہتھیار دیکھ کر
’بستی میں ٹُھنک گیا ہے یہ کیوں ؟بانس کی طرح،
کہتے تو ہوں گے جھونپڑے، مِینار دیکھ کر
کیا کیا رئیس اَینٹھنے رقبہ نکل پڑے
اُس کے بدن کا حلقۂ پٹوار دیکھ کر
بکھرے ہیں کنکروں سے جو ماجد یہاں وہاں
یاد آئیں کیوں گُہر ترے اشعار دیکھ کر
ماجد صدیقی

غیروں کی محتاج مگر سرکار یہاں

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 81
گھر گھر رسماً زر کے ہیں انبار یہاں
غیروں کی محتاج مگر سرکار یہاں
رکھیں گرم فقط جیبیں کارندوں کی
ٹیکس بچائیں کیا کیا ٹیکس گزار یہاں
نرخ بڑھائیں وزن کریں کم چیزوں کے
ہوتا ہے یوں دُگنا کاروبار یہاں
بندشِ آب و ضیا پر ہر سو ہنگامے
سانس تلک لینا بھی ہوا دشوار یہاں
نسل بڑھائیں پودا اک بھی لگا نہ سکیں
بس اِک حد تک ہیں سارے ہُشیار یہاں
وہ جو ملا تھا وہ تو گنوا بیٹھے ہیں ہم
اُس سا ملے اب، کب دُرّ شہوار یہاں
ماجد جو بھی کہے کچھ کہہ دے سوتے میں
تجھ سی بہم کس کو چشمِ بیدار یہاں
ماجد صدیقی

یہ سانحہ، کوئی بڑی سرکار نہ جانے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 43
ہے کس کو یہاں کون سا آزار، نہ جانے
یہ سانحہ، کوئی بڑی سرکار نہ جانے
جانے نہ کرے تیرگی کیا، اُس کی نمایاں
جگنو کا کِیا، کوئی شبِ تار نہ جانے
مٹی کو وہ بستر کرے، بازو کو سرہانہ
جو خانماں برباد ہے، گھر بار نہ جانے
چیونٹی کو ہمیشہ کسی چوٹی ہی سے دیکھے
عادل، کسی مظلوم کی تکرار نہ جانے
پینے کو بھی چھوڑے نہ کہیں، آبِ مصفّا
سیلاب ستم کا، کوئی معیار نہ جانے
کس درجہ جُھکانا ہے یہ سر، عجز میں ماجدؔ
بندہ ہی یہ جانے، کوئی اوتار نہ جانے
ماجد صدیقی

ہمارے نام ہی موسم کی ہر پھٹکار ہو جیسے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 92
ہماراتن بدن ہی جھاڑ ہو، جھنکار ہو جیسے
ہمارے نام ہی موسم کی ہر پھٹکار ہو جیسے
ذرا سا بھی جو بالا دست ہو، ہم زیر دستوں کے
سِدھانے کو وُہی سب سے بڑی سرکار ہو جیسے
یہاں مخصوص ہے ہر دم جو چڑیوں فاختاؤں سے
اُنہی سا کچھ ہماری جاں کو بھی آزار ہو جیسے
پتہ جس کا صحیفوں میں دیا جاتا ہے خلقت کو
نفس میں اِک ہمارے ہی، وُہ ساری نار ہو جیسے
ہمیں ہی در بہ در جیسے لئے پھرتا ہے ہر جھونکا
وجود اپنا ہی ماجدؔ اِس زمیں پر بار ہو جیسے
ماجد صدیقی

جانے میں کیوں گلستاں سے بیزار تھا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 51
گُل بہ گُل حُسن، میرا طلب گار تھا
جانے میں کیوں گلستاں سے بیزار تھا
سامنے اُس کے خاموش تھے اِس طرح
ہر خطا کا ہمیں جیسے اقرار تھا
زندگی جب نثارِ غمِ دہر تھی
اُس کا ملنا بھی ایسے میں بیکار تھا
مُنہ سے کہنا اگرچہ نہ آیا اُسے
بور تھا مجھ سے وہ سخت بیزار تھا
زندگی ہم سے ماجدؔ گریزاں تو تھی
جُرم اپنا بھی کچھ اِس میں سرکار تھا
ماجد صدیقی

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑