تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

زمانوں

دلوائے بارود ہمیں بیگانوں سے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 63
فصل اُٹھے جو بھی اپنے کھلیانوں سے
دلوائے بارود ہمیں بیگانوں سے
سچ مچ کا سچ جس نے سرِ دربار کہا
تیر نہ کیا کیا اُس پر چلے کمانوں سے
ہم وُہ لوگ ہیں آج کے دور میں بھی جن کا
رشتہ ہے پتّھر کے گئے زمانوں سے
جھونپڑیوں سے اُٹھ کر آنے والوں کے
طَور بدلتے ہیں کب نئے مکانوں سے
آجر سوچے، دیکھ کے تن مزدوروں کے
کتنا سونا نکلے گا اِن کانوں سے
باغ پہ اِک وُہ رُت بھی آئی تھی جس میں
پنچھی تک چمٹے دیکھے کاشانوں سے
جائے گا کب حبس کا موسم یُوں ماجدؔ
جب تک آگ نہ پھُوٹے گی شریانوں سے
ماجد صدیقی
Advertisements

خوف جاتا نہیں مچانوں کا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 16
دل سے تیروں کا اور کمانوں کا
خوف جاتا نہیں مچانوں کا
ایک ہی گھر کے فرد ہیں ہم تم
فرق رکھتے ہیں پر زبانوں کا
رُت بدلنے کی کیا بشارت دے
ایک سا رنگ گلستانوں کا
کون اپنا ہے اِک خدا وہ بھی
رہنے والا ہے آسمانوں کا
بات ماجدؔ کی پُوچھتے کیا ہو
شخص ہے اِک گئے زمانوں کا
ماجد صدیقی

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑