تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

جائیے

یہ بھی اِک رسمِ جنوں کیونکر نہ اب دُہرائیے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 23
تیر ہی چاہے تنے کے ساتھ لگ کر کھائیے
یہ بھی اِک رسمِ جنوں کیونکر نہ اب دُہرائیے
کر بھی کیا لے گا کہ دل بچّہ ہے اِک بے آسرا
جھڑکئے یا دے کے میٹھی گولیاں بہلائیے
چاہئے کچھ شغل، دشمن تو کبھی کا جا چکا
نفرتوں کا زہر آپس ہی میں اب پھیلائیے
قبر تک جائے گا تکمیلِ تمنا کا خیال
یعنی انگوٹھا یہی اب چوستے سو جائیے
بیٹھئے بھی تو سخن نا آشنا لوگوں کے پاس
گوش و لب گھر سے نکلتے ہی کہیں رکھ جائیے
ماجد صدیقی

لیکن جو ہو چکی وہ خطا مان جائیے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 19
سچّے ہو گر تو اور نہ آنکھیں چُرائیے
لیکن جو ہو چکی وہ خطا مان جائیے
کیو ں وقتِگفتگو ہے نگاہوں میں اضطراب
زیرِ زباں ہے جو وہ زباں پر بھی لائیے
میں پُھول بھی ہوں گر تو بگولوں کی زد پہ ہوں
میں کھو چکا حواس مرے منہ نہ آئیے
کھینچے جو اپنی سمت اُنہیں بھی جو دُور ہیں
ایسا بھی کوئی پُھول سرِ لب کِھلائیے
لَو دے اٹھے گلاب نہ آخر سرِحجاب
اس طور بھی نہ روئے درخشاں چھپائیے
ماجد صدیقی

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑