تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

باج

سچ ہے اپنے خداوندوں کا ہے یہ کاج

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 36
جمہوریت میں بھی ولی عہدوں کا رواج
سچ ہے اپنے خداوندوں کا ہے یہ کاج
کھوج لگانے پر جانے کیا کیا نکلے
خوب ہے چھپے رہیں گر ہَما شُما کے پاج
ہمیں ارادت آقائی و غلامی سے
ہم کرتے ہیں ادا جانے کس کس کا باج
ساری دوائیں بہر فسادِ جسم بنیں
دل کے میَلوں کا ہو بھی تو کیا ہو علاج
بعد بیاہ کے ٹھہریں تختۂ مشق سبھی
بیٹیاں پھنّے خانوں کی بھی کریں کب راج
آنے و الا ہو یا بِیت گیا کل ہو
پیشِ نظر رکھنا ہے ہمیں تو آج ہی آج
قیس کو ہے توقیر، سگِ لیلیٰ تک کی
عشق پرستوں کا ہے ماجد اور سماج
ماجد صدیقی

نہیں رقیب تو رہ میں مری سماج سہی

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 73
مجھے ہی ضبطِ تمنّائے دل کی لاج سی
نہیں رقیب تو رہ میں مری سماج سہی
زبان سے بھی کہو بات جو نگاہ میں ہے
جو حشر دل پہ گزرنا ہے کل وُہ آج سہی
کسی کے نام تو ہونا ہے اِس ریاست کو
خُدا کے بعد تمہارا ہی دل پہ راج سہی
ستم کا نام نہ دیں ہم کسی ستم کو بھی
یہ اہتمام بھی اَب شہر کا رواج سہی
کرو نہ شاخِ بدن سے سروں کے پھُول جُدا
سدا بہار تمہارے ہی سر کا تاج سہی
ہلا نہ لب بھی ستم گرکے سامنے ماجدؔ
جہاں ہیں اور وہاں یہ بھی ایک باج سہی
ماجد صدیقی

پیہم نگر اُمید کا، تاراج مِلا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 62
کل تھا جو مِلا، کرب وُہی آج ملا ہے
پیہم نگر اُمید کا، تاراج مِلا ہے
اِک چیخ سی اور بعد میں کُچھ خون کی بُوندیں
شاہین کو چڑیوں سے، یہی باج مِلا ہے
دستک سے، سرِ شہر پڑاؤ کو، جو دی تھی
ایسے بھی ہیں کُچھ، جن کو یہاں راج مِلا ہے
کانوں میں کوئی گرم سخن، آنے نہ پائے
سر ڈھانپ کے رکھتے ہیں جنہیں تاج مِلا ہے
پھُوٹے تو بنائیں، نیا اک اور گھروندا
ماجدؔ ہمیں کرنے کو، یہی کاج ملِا ہے
ماجد صدیقی

WordPress.com پر بلاگ.

Up ↑