تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

اترا

رُخ بہ رُخ نیّتیں بھی لکھا کر

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 41
عرش پر بیٹھ کر نہ دیکھا کر
رُخ بہ رُخ نیّتیں بھی لکھا کر
بعد میں چاہے پھول بن کے کھلے
آگ پر لیٹ اور تڑپا کر
انت تیرانہیں ہے حشر سے کم
آدمی ہے تو یہ بھی سوچا کر
تو ہے عاصی جنم سے پہلے کا
روزوئی سا خود کو دھونکا کر
لے تو بس ہوش ہی کے ناخن لے
خوش قیاسی پہ ہی نہ جایا کر
پیڑ سے یا تو ٹُوٹنے ہی نہ پا
ٹہنیوں میں نہ پھرسے اٹکا کر
بحر کو چھو کے ہی نہ فاتح بن
ہاں تہوں تک بھی اِس کی اُتراکر
یاد کر کر کے کرب ہائے جاں
ذائقہ مت دہن کا پھیکا کر
جی نہ خوش فہمیوں کی جنّت میں
آنکھ دوزخ سے بھی ملایا کر
دیکھ اوروں کے ہی تماشے دیکھ
ایسا کرنے کو گھر نہ پھونکا کر
جسم اپنا ہی دھوپ سے نہ بچا
اپنے ہمسائے کو بھی پوچھا کر
ہاتھ آئے اگر شکار کوئی
ہاں بس اپنی ہی پیٹ پوجا کر
کرکے اعلان، حق بیانی کا
جھوٹ کم کم زباں پہ لایا کر
اے نمازی ثواب یہ بھی کما
حد سے کم گاہکوں کو لُوٹا کر
حج کی فرصت ملے تو جا کے وہاں
جیسا جائے نہ ویسا لَوٹا کر
جاں سے، دل سے عزیز روزہ دار!
روزہ داری کا حق نبھایا کر
مایہ اندوزیاں عزیز نہ رکھ
پل بھی کچھ زندگی کے سینتا کر
اے خنک طبع رات کی رانی
دن کی حدّت میں بھی تو مہکا کر
بند بوتل نشے کی وہ لڑکی
من کی خلوت میں جا کے کھولا کر
سارے ہتھیار اپنے تیز نہ رکھ
سادہ چشمی سے بھی تو دیکھا کر
جھونک مت حاویوں میں تُو اِن کو
بیٹیاں دیکھ کر بیاہا کر
وسعتِ لطف سا ہے وہ انگناں
اُس سے بیلوں کی طرح لپٹا کر
کون منہ میں ترے نوالے دے
خود مسائل سے اپنے نمٹا کر
اُس کی لپٹوں کو اوڑھ لے تن پر
وہ کہ خوشبو ہے اُس کو پہنا کر
ہم کہاں تجھ پہ بوجھ بننے لگے
دِل نہ اے شخص!اپنا چھوٹا کر
کر سکے تو نوالے اپنے کاٹ
میہماں کو نہ گھر سے چلتا کر
اُس کو تن پر کِھلا گُلاب سمجھ
منہ نہ روہانسا بنایا کر
دوسروں کا کیا نہ تُو گِنوا
تُونے خود کیا کیا وہ سمجھا کر
ہاں نہ ہر کِذب گو کی ہاں میں ملا
تُو ہے برحق تو خوب بولا کر
چاہے تیرے ضمیر ہی میں وہ ہو
گانٹھ ماجد ہر ایک کھولا کر
ماجد صدیقی

فتنہ ہمسری و نا ہمسری کا او یار

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 6
اپنے یہاں یہ حشر ہے کب کا بپا !او یار
فتنہ ہمسری و نا ہمسری کا او یار
دیکھ ذرا بارش کے بعد کی قوسِ قزح
در اُس شوخ کا دیکھ فلک پہ کھلا او یار
وہ کہ گلاب و سمن ہے جس کا بدن اُس سے
مانگنے آئے مہک نت بادِ صبا او یار
میں کہ کہے کے نیاپے پر مچلوں وہ سب
لگے ہے مجھ سے پہلے کہا گیا او یار
حاکمِ وقت سے عدل کی بھیک کی خواہاں ہے
تخت پہ ٹنگی ہوئی اک نُچی قبا او یار
چڑیوں پر ژالوں سے گزرتے کیا گزری
خیر کی کوئی خبر ایسی بھی سنا او یار
پڑھ پڑھ کے اُس کو تُو اپنی تاب بڑھا
تازہ سخن ہے جو ماجد پر اُترا او یار
ماجد صدیقی

بعد اُس کے کیا ہُوا؟ ہوتا ہے جو، ویسا ہُوا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 4
حق سرا دربار پہنچے تو سلوک اُلٹا ہُوا
بعد اُس کے کیا ہُوا؟ ہوتا ہے جو، ویسا ہُوا
ہم نے پُچھواناکیا ابلیس سے، کیوں پِٹ گئے؟
وہ یہ بولا، ساتھ اُس کے جو ہُوا اچّھا ہُوا
کی اطاعت میں رضا اپنی تو اَوجِ عرش سے
آ پڑے ہم فرش پر حُلیہ لیے بگڑا ہُوا
بے تفنگ و تِیر بہرِ صَید نکلے شوق سے
لَوٹ کر آئے تو چہرہ تھا بہت اُترا ہُوا
شیر صاحب نے ہرن پر ہاتھ کچّا ڈال کر
شیرنی کو آ دِکھایا رنگِ رُو، اُترا ہُوا
دہشتی انسان کیا سے کیا کرشمے کر چلے
پُشتِ خرپر ریت تک میں بمب تھا لپٹا ہُوا
فصل پہلی کھیت کی تھی یا بھلے کوئی دُلہن
چودھری کے گھر سے جو لَوٹا لگا برتا ہُوا
بامُرادی میں تھی ماجِد سُرخرُوئی اور ہی
بعدِ باراں آسماں جیسے لگے کھلتا ہُوا
ماجد صدیقی

ہم نہ بتلا تے، نہیں، ایسا نہیں

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 3
آپ ہی نے رازِدل پوچھا نہیں
ہم نہ بتلا تے، نہیں، ایسا نہیں
آپ سے ملنے کا ایسا تھا نشہ
رنگ تھا جیسے کوئی ،اُترا نہیں
سنگ دل تھے اہلِ دنیا بھی بہت
آپ نے بھی ،پیا ر سے دیکھا نہیں
دمبدم تھیں اِک ہمِیں پر یورشیں
تختۂ غیراں کبھی الٹا نہیں
توڑنا، پھر جوڑنا، پھر توڑنا
ہم کھلونوں پر کرم کیا کیا نہیں
ماجد صدیقی

کون ہے جو دل مرا بہلا سکے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 64
حسن شاخوں کا انہیں لوٹا سکے
کون ہے جو دل مرا بہلا سکے
آسماں کے، اِس زمیں کے، دہر کے
دل یہ کس کس کے ستم گنوا سکے
اُس ہوا کی خنکیاں کس کام کی
روح کے گھاؤ نہ جو سہلا سکے
سانس تک بھی قرض کا لیتا ہے جب
آدمی کس بات پر اِترا سکے
آس دوشیزہ ہے وہ جس کو کبھی
ہم نہ انگوٹھی کوئی پہنا سکے
خود سرِ دربارِ شہ عریاں ہے جو
ذوق کیا خلعت ہمیں دلوا سکے
ماجد صدیقی

جو کہنا ہے، پہلے کیوں نہ پرکھا جائے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 53
یہ کیا؟ کچھ کہنے کے بعد ہی سوچا جائے
جو کہنا ہے، پہلے کیوں نہ پرکھا جائے
مان بھی لیں، ممکن ہے، قدم اپنے ہی غلط ہوں
دُور نکل آئے ہیں بہت، اب لوٹا جائے
کھوج میں شاید شرط یہی، بار آور ٹھہرے
اور ذرا گہرے پانی میں، اُترا جائے
دریا میں کھُر جائے گھڑا کھُر جانے والا
ٹھہرا ہو جو عہد وہ عہد نہ توڑا جائے
مژدۂ عید سنانے والا چاند، ہمیشہ
بعد برس کے، پھر چاہت سے دیکھا جائے
ماجد صدیقی

بھیڑیوں کی دھاڑ سے ہے دشت بھر دِبکا لگا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 17
ذِی نفس جو بھی ہے اُس کو جان کا کھٹکا لگا
بھیڑیوں کی دھاڑ سے ہے دشت بھر دِبکا لگا
اِس طرح کرنے سے اُٹّھے گی عمارت اور بھی
سرفرازی چاہیے تو اور بھی پیسا لگا
جان لے اخلاق سے ہٹ کر بھی کچھ آداب ہیں
مختصر یہ ہے کہ جتنا ہو سکے مسکا لگا
نرخ اِس یوسف کے اَنٹی سے بھی ارزاں ہو گئے
آدمی ہی جس طرف دیکھا ہمیں سستا لگا
لُو چلی تو، وہ کہ منکر تندیِ موسم کے تھے
چیخنا اُن کا ہم اہلِ دل کو بھی اچّھا لگا
کر کے اک قتلِ مسلسل سے ہمیں دو چار وہ
پُوچھتا ہے وار خنجر کا کہو، کیسا لگا
دیکھ کر دھندلا گیا جس کو بدکتا چاند بھی
اب کے یوں روئے سحر ماجد ہے کچھ اُترا لگا
ماجد صدیقی

رُوح میں تُجھ کو سمایا دیکھوں

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 11
تن بدن لُطف سے نِکھرا دیکھوں
رُوح میں تُجھ کو سمایا دیکھوں
اشک در اشک ہوں عنواں تیرے
آئنوں میں تجھے اُترا دیکھوں
فیصلہ یہ بھی سُنا دے مجھ کو
مَیں ٹھہر جاؤں کہ رستہ دیکھوں
دیکھ کر چاند اُفق پر اُبھرا
تُجھ کو دیکھوں ترا ماتھا دیکھوں
ہاتھ پر لمس کی تحریر تری
ان لبوں سے تُجھے چکھا دیکھوں
کیسا موسم ہے یہ دِل پر ماجدؔ
تہ بہ تہ رنگ یہ کیا کیا دیکھوں
ماجد صدیقی

غارت گر ہی شاید سب سے اچّھا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 30
جیسا بھی چاہے حصہ لے لیتا ہے
غارت گر ہی شاید سب سے اچّھا ہے
دُھوپ میں کون، کسی کو لے کر ساتھ چلے
چھاتا جس کے ہاتھ ہے سایہ اُس کا ہے
ہاتھ میں لانے، پھر اپنی ہریالی کو
پتّا پیڑ سے، بہتی نہر میں اُترا ہے
شہر میں اُڑتی گرد سے ہو کر آنے پر
چہرہ تو کیا دل بھی مَیلا لگتا ہے
اوٹ میں شب کی ماجدؔ، کچھ کچھ اور لگے
چور بھی ظاہر میں تو شخص ہمیں سا ہے
ماجد صدیقی

WordPress.com پر بلاگ.

Up ↑