تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

ٹیگ

آیا

ویلا آپوں ساڈے ناں دیاں، ویلاں ہوکن آیا اے

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 110
ہک تے ٹِکیا پتھر اَساں، اِنج دا پرت وکھایا اے
ویلا آپوں ساڈے ناں دیاں، ویلاں ہوکن آیا اے
ساڈے مان دا ضامن، ساڈے دیس دے سر دا شملہ اے
اوہ جھنڈا سدھراں نے جیہڑا، ساڈے ہتھ پھڑایا اے
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

اکھ بی مینڈھی پھڑکی نویں، تے کاگ بی خبر لیایا نئیں

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 86
کیہ آکھاں اوہ آوندا ہوسی، ہن توڑیں تے آیا نئیں
اکھ بی مینڈھی پھڑکی نویں، تے کاگ بی خبر لیایا نئیں
آٹا گُنھدی دا آٹا بی، اُچھلیا نئیں پراتاں چوں
خط پتر بی اُس کملے دا، ڈاکیے آن تھمایا نئیں
چُونڈھی وڈھ کے دس توں مانھ، میں کیہڑے ویہن چ ویہہ گئی آں
نیزہ نیزہ دیہوں چڑھ آیا، رِڑکا بی میں پایا نئیں
آپ ائی میں، اِس بُھگے رُکھ دے تھلّے، ڈیرا لاگھِدا
پریتاں دا پرچھانواں ٹُرکے، کول کسے دے آیا نئیں
مینڈھی حرص دے کُتے تے، کَھورُو کھٹدے ائی رہ گئے نیں
دل دے باز نیانے ائی، کوئی جھاڑیوں ساہ اٹھایا نئیں
کتھے تے ونج وَجنا اہیا، چُھٹیا تیر کماناں چوں
وچ کھبانی وٹا رکھ کے، آپ ائی تُدھ پِھرایا نئیں
خبرے کتھوں آ گئی ماجد، اکھیاں وچ رَتینجن جیہی
نظراں ساہمنے تے، کوئی سُوہا بھوچھن بی، لہرایا نئیں
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

سُکھ دی بھِکھیا منگن دا وی، چج نہ آیا مینوں

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 43
خورے کنھے پہلی واری، خوف دوایا مینوں
سُکھ دی بھِکھیا منگن دا وی، چج نہ آیا مینوں
مِیلاں تیکن سیک میرے توں، لوکی تَرَیہہ تَرَیہہ بہندے
اگ پجاری سدھراں نے، اِنج بھٹھ بنایا مینوں
نہ میں سُکا پَتّر بنیا، نہ گھن چھانواں بُوٹا
جیہڑی رُت وی بدلی، اوہنے ائی ترسایا مینوں
پہلاں پہل تے اوہدی، اک اک گل تے، اوکھا ہویا
فر تے اپنے آپ تے وی، جئیوں رحم نہ آیا مینوں
ماجدُ میں جس راہ ٹُر چلیا، ایہہ راہ کدوں مکنی
اَنھیاں گنگیاں سوچاں نے، واہ واہ پدھڑایا مینوں
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)

ساتھ ہی جانے کونداسا کیوں آنکھوں میں لہرایا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 134
آشیان کا پہلا تنکا روئے شجر پہ ٹکایا ہے
ساتھ ہی جانے کونداسا کیوں آنکھوں میں لہرایا ہے
ایک سوال ہے سُوئے عدالت کیوں نہ گئے وہ اس کیخلاف
بازاروں میں جس کا پتلا سُولی پر لٹکایا ہے
صبح سویرے کل کی طرح تازہ اخبار کے عنواں سے
تازہ خون کے نقش لیے پھر ایک مرقّع آیا ہے
پینچ وہی سردار وہی جو روند کے آئیں خلقت کو
اگلوں نے بھی پچھلوں سا انہی کو گلے لگایا ہے
پھول پھول کا حال سنائے وہ جو اگلے پھولوں کو
ہم نے تو اُس بھنورے کو اپنا مرشد ٹھہرایا ہے
سچ پوچھیں تو اس نے بھی بُش صاحب ہی کا حق مارا
اوباما نے کیسے ماجد امن انعام کمایا ہے
ماجد صدیقی

جانے کس بیوہ نے دیپک گایا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 1
آنکھ میں پھر اک شعلہ سا لہرایا ہے
جانے کس بیوہ نے دیپک گایا ہے
گوندھ کے آٹا، اُس سے بنے کھلونوں سے
ماں نے روتے بچّے کو بہلایا ہے
کس کس اور سے کیا کیا طوطے آ جھپٹے
باغ میں جب سے پیڑ پہ پھل گدرایا ہے
جھونپڑیاں تک محلوں کے گُن گاتی ہیں
گھر گھر جانے کس آسیب کا سایا ہے
صاحبِ ثروت پھر نادار کے جبڑے میں
اپنے کام کے لفظ نئے رکھ آیا ہے
ساتھ کے گھر میں دیکھ کے پکتا خربوزہ
ماجدؔ بھی وڈیو کیسٹ لے آیا ہے
ماجد صدیقی

ہم سے بچھڑا تو پھر نہ آیا وُہ

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 23
بن کے ابرِ رواں کا سایا وُہ
ہم سے بچھڑا تو پھر نہ آیا وُہ
اُڑنے والا ہوا پہ خُوشبو سا
دیکھتے ہی لگا پرایا وُہ
جبر میں، لطف میں، تغافل میں
کیا ادا ہے نہ جس میں بھایا وُہ
جیسے پانی میں رنگ گھُل جائے
میرے خوابوں میں یُوں سمایا وُہ
مَیں کہ تھا اِک شجر تمّنا کا
برگ بن بن کے مجھ پہ چھایا وُہ
تیرتا ہے نظر میں شبنم سا
صبحدم نُور میں نہایا وُہ
آزمانے ہماری جاں ماجدؔ
کرب کیا کیا نہ ساتھ لایا وُہ
ماجد صدیقی

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑