تلاش

ماجد صدیقی

شاعرِ بے مثال ماجد صدیقی مرحوم ۔ شخصیت اور شاعری

زمرہ

شعری البم

ہمیں بھی خبط سا لاحق ہے امیدِ سحر کب ہے

ہمیں بھی خبط سا لاحق ہے امیدِ سحر کب ہے

ماجد صدیقی

افق پر، مہر بننا تھا جسے اب وہ شرر، کب ہے ہمیں بھی خبط سا لاحق ہے امیدِ سحر کب ہے
افق پر، مہر بننا تھا جسے اب وہ شرر، کب ہے
ہمیں بھی خبط سا لاحق ہے امیدِ سحر کب ہے

افق پر، مہر بننا تھا جسے اب وہ شرر، کب ہے

ہمیں بھی خبط سا لاحق ہے امیدِ سحر کب ہے

کبھی ایسا بھی تھا لیکن نہ تھے جب بخت برگشتہ

اِسے دریوزہ گر کہئے یہ دل اب تاجور کب ہے

اثر جس کا مرض کی ابتدا تک ہی مسلّم تھا

ملے بھی گر تو وہ نسخہ بھلا اب کارگر کب ہے

چلے تو ہیں کہ انسانوں کو ہم، ہم مرتبت دیکھیں

مگر جو ختم ہو جائے بھلا یہ وہ سفر کب ہے

علی الاعلان حق میں بولتا ہو جو نحیفوں کے

اُسے مردود کہئیے شہر میں وہ معتبر کب ہے

قفس کا در کہاں کھُلنے کا ہے لیکن اگر ماجد

کھُلا بھی دیکھ لیں تو اعتبارِ بال و پر کب ہے

Advertisements

اُس کو پاگل ہی کہو رات کو جو رات کہے

اُس کو پاگل ہی کہو رات کو جو رات کہے

ماجد صدیقی

منحرف حرف سے کاغذ بھی لگے جب کس سے جا کر یہ قلم شّدتِ صدمات کہے
منحرف حرف سے کاغذ بھی لگے جب
کس سے جا کر یہ قلم شّدتِ صدمات کہے

خلقتِ شہر سے کیوں ایسی بُری بات کہے

اُس کو پاگل ہی کہو رات کو جو رات کہے

جاننا چاہو جو گلشن کی حقیقت تو سُنو

بات وہ شاخ سے نُچ کر جو جھڑا پات کہے

اِس سے بڑھ کر بھی ہو کیا غیر کی بالادستی

جیت جانے کو بھی جب اپنی نظرمات کہے

کون روکے گا بھلا وقتِ مقرّر پہ اُسے

بات ہر صبح یہی جاتی ہوئی رات کہے

بس میں انساں کے کہاں آئے ترفّع اس سا

وقت ہر آن جو اپنی سی مناجات کہے

منحرف حرف سے کاغذ بھی لگے جب

کس سے جا کر یہ قلم شّدتِ صدمات کہے

دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے

دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا
دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے
جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا


جس کو باوصفِ ستم اپنا کہا

اُس نے بھی اب کے ہمیں رُسوا کہا

دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے

جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا

عاق ہو کر رہ گئے پل میں سبھی

پیڑ نے پتّوں سے جانے کیا کہا

برق خود آ کر اُسے نہلا گئی

جس شجر کو ہم نے تھا میلا کہا

قولِ غالب ہے کہ اُس سے قبل بھی

ایک شاعر نے سخن اچّھا کہا

اک ہماری ہی زباں تھی زشت خُو

اُس نے تو ماجد نہ کچھ بے جا کہا
ماجد صدیقی

یہ لفظ تھے کل ایک جنونی کی زباں پر

یہ لفظ تھے کل ایک جنونی کی زباں پر بسنے سے ہے اِس شہر کا ہونا بھسم اچّھا
یہ لفظ تھے کل ایک جنونی کی زباں پر
بسنے سے ہے اِس شہر کا ہونا بھسم اچّھا

سمجھیں وہ ہمارے لیے ابرو میں خم اچّھا
رکھنے لگے اغیار میں اپنا بھرم اچّھا

کہتے ہیں وہ آلام کو خاطر میں نہ لاؤ
ٹھہرے گا تمہارے لیے اگلا جنم اچّھا

وجداں نے کہی بات یہ کیا حق میں ہمارے
چہرہ یہ مرا اور لباس اُس کا نم اچّھا

جو شاخ بھی کٹتی ہے کٹے نام نمو پر
دیکھو تو چمن پر ہے یہ کیسا کرم اچّھا

کس درجہ بھروسہ ہے اُنہیں ذات پہ اپنی
وہ لوگ کہ یزداں سے جنہیں ہے صنم اچّھا

یہ لفظ تھے کل ایک جنونی کی زباں پر
بسنے سے ہے اِس شہر کا ہونا بھسم اچّھا

غیروں سے ملے گا تو کھلے گا کبھی تجھ پر
ماجد بھی ترے حق میں نہ تھا ایسا کم اچّھا

WordPress.com پر بلاگ.

Up ↑