دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا
دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے
جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا


جس کو باوصفِ ستم اپنا کہا

اُس نے بھی اب کے ہمیں رُسوا کہا

دَمبدم ہوں ضو فشاں اُس روز سے

جب سے ماں نے مجھ کو چاند ایسا کہا

عاق ہو کر رہ گئے پل میں سبھی

پیڑ نے پتّوں سے جانے کیا کہا

برق خود آ کر اُسے نہلا گئی

جس شجر کو ہم نے تھا میلا کہا

قولِ غالب ہے کہ اُس سے قبل بھی

ایک شاعر نے سخن اچّھا کہا

اک ہماری ہی زباں تھی زشت خُو

اُس نے تو ماجد نہ کچھ بے جا کہا
ماجد صدیقی

Advertisements