ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 204
کیا خوف معاً یہ چھا گیا ہے
دل جیسے گلے میں آ گیا ہے
ماجد صدیقی
Advertisements