ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 107
اپنے کیے سے مکرنے کی
کیا ہے ضرورت ڈرنے کی
چھینیں تخت جھِپَٹّے سے
اُف یہ حرص اُبھرنے کی
عید کا چندا کہتا ہے
ساعت ہے یہ سنورنے کی
بوڑھے، بیتے دن ڈھونڈیں
رُت آئی ہے نکھرنے کی
دھج سے جیے تو انساں کو
چِنتا ہو کیوں مرنے کی
بچپن ہی سے دُھن ہے ہمیں
پاتالوں میں اُترنے کی
ہاں ہاں تیرا سخن ماجد!
لَے ہے سریلی، جھرنے کی
ماجد صدیقی
Advertisements