ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 29
وہ کہ آمروں سے کیا تھا جو
وہ وفا کا عہد نبھا دیا
مرے منصفوں نے بہ جبر و زر
سرِدار مجھ کو سجا دیا
ہوئے حکمراں بھی تو کیا ہوئے،
جنہیں تھا جنونِ برابری
وہ کہ خاص و عام میں فرق تھا
وُہی فرق گرنہ مٹا دیا
تھی غرض تو بس مری جاں سے تھی،
گئی جاں تو غیر ہوئے سبھی
مجھے نذرِ خاک و زمیں کیا
مجھے اپنے ہاتھوں جلا دیا
کہیں تاجور کہیں خاک پا
کہیں خاکِ پا سے بھی ماورا
میں کہ اس کے چاک کی خاک تھا
مجھے جیسا چاہا بنادیا
کبھی برتری جو دکھا سکے
تو فرشتگاں پہ بھی چھا گئے
کہیں آزمائی وہ سفلگی
کہ ہمِیں نے عرش ہلادیا
جو فلک پہ پائے گئے کبھی
، تو ہمیں تھے راندۂ چرخ بھی
یہ زمیں کہ مادرِ مہرباں ہے،
اسے بھی ہم نے ہے کیا دیا
یہ وہی ہے جو ترے لطف سے
کبھی شاعری کا الاؤ تھا
یہ تمہارا ماجدِ مبتلا
ہے دئے سا جس کو بجھا دیا
ماجد صدیقی
Advertisements