ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 6
اپنے یہاں یہ حشر ہے کب کا بپا !او یار
فتنہ ہمسری و نا ہمسری کا او یار
دیکھ ذرا بارش کے بعد کی قوسِ قزح
در اُس شوخ کا دیکھ فلک پہ کھلا او یار
وہ کہ گلاب و سمن ہے جس کا بدن اُس سے
مانگنے آئے مہک نت بادِ صبا او یار
میں کہ کہے کے نیاپے پر مچلوں وہ سب
لگے ہے مجھ سے پہلے کہا گیا او یار
حاکمِ وقت سے عدل کی بھیک کی خواہاں ہے
تخت پہ ٹنگی ہوئی اک نُچی قبا او یار
چڑیوں پر ژالوں سے گزرتے کیا گزری
خیر کی کوئی خبر ایسی بھی سنا او یار
پڑھ پڑھ کے اُس کو تُو اپنی تاب بڑھا
تازہ سخن ہے جو ماجد پر اُترا او یار
ماجد صدیقی
Advertisements