ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 27
وقت اَن ہونی عجب دکھلا گیا
دل دہل کر ہے گلے میں آ گیا
ہم نے ہے ملہار بوندوں سے سنی
لُو بھبھوکا بھی ہے دیپک گا گیا
تُندخُوئی کا چلن اُس شوخ کا
رفتہ رفتہ ہے ہمیں بھی بھا گیا
کھیل میں نااہل ہمجولی مرا
میری ساری گاٹیاں اُلٹا گیا
ہاں وہی نیندیں اُڑا دیتا ہے جو
گھر میں ہے مینڈک وہی ٹرّا گیا
پیار جتلاتے بہ حقِ بیکساں
اب تو جیسے ہے گلا بھرّا گیا
صبح ہوتے ہی ٹریفک کا دُھواں
کِھل اٹھے پھولوں پہ ماجد چھا گیا
ماجد صدیقی
Advertisements