ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 7
برتری پائی ہے شاخوں نے خزاں سے جنگ میں
لب کشا عنچے ہیں اَب کچھ اور ہی آہنگ میں
وُہ کہ جس کی دِید کا ہے ذائقہ کچھ اور ہی
شہد کا چھتّا نظر آئی لباسِ تنگ میں
ذکر سے اُس کے بہت شیریں سہی نغمہ مگر
اُس سی لَے کی تازگی کب تھی رباب و چنگ میں
زیور و زر ہی دُلہن کو ساتھ لے کر آ گئے
آپ تو دُولہے میاں تولے گئے پاسنگ میں
لمس سے ممکن کہاں پہچان سبز و سرُخ کی
اِس غرض کو ڈال کر پانی بھی دیکھو رنگ میں
چھُو لیا ہے فکر نے کس دردِ زہر آلُود کو
بِس چڑھی لگتی ہے ماجدؔ تیرے اِک اِک انگ میں
ماجد صدیقی
Advertisements