ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 19
شاخ پہ برگِ زرد ہی کیوں ٹھہرائے مجھے
تُند ہوا آ آ کر کیوں دہلائے مجھے
بادل میرے نام اُمڈ کے نہ برسے جو
ڈال کے لیت و لعل میں کیوں ترسائے مجھے
میری ولی عہدی کیونکر تسلیم نہیں
بات یہ بس دربار کی ہے کھولائے مجھے
پل پل جس کی میں نے خیر طلب کی ہے
خلق بھی کچھ تو میرا دیا لوٹائے مجھے
مجھے ملے پھل میرے سینچے پودے کا
اور نہ ملے تو چَین بھلا کیوں آئے مجھے
اپنے لفظ ہی ٹھہریں پُھونک مسیحا کی
ایسا کون ہے ماجِد جو سہلائے مجھے
ماجد صدیقی
Advertisements