ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 20
تلاشِ رزق میں ہر دم پڑے قبیلوں سے
مجھے نکال کبھی کرگسوں سے، چیلوں سے
لگی ہے خِلقتِ آدم تلک خطائے خُدا
پڑا ہے واسطہ جب بھی کبھی رذیلوں سے
ہر عہد میں یہی عنواں حدِ ستم کا ہے
ہتھیلیوں کا تعلق سا ہے جو کِیلوں سے
کسی سے پُوچھئے، جانے اِسے وُہ مِلک اپنی
یہی فریب کرے چاند ساری جھیلوں سے
وُہ دبدبہ ہے ستمگر کا ہر کہیں جیسے
لگا کھڑا ہو وُہی شہر کی فصیلوں سے
نگاہ برق بھی ماجدؔ اُسی پہ پڑتی ہے
پکے جو فصل تو آئے نظر وُہ میلوں سے
ماجد صدیقی
Advertisements