۲۵دسمبر۱۹۶۴ء کے نام

جب دھندلے گمانوں پر

روشن حقیقتوں کے باب کھلے

لازم ہے اِک دَورِ طرب کے بعد مجھے تو بھول بھی جا

میں اِک بار تجھے پھر چاہوں، عہد نیا آغاز کروں

ماجد صدیقی
Advertisements