ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 39
جان جیسے گھری پھر چتاؤں میں ہے
آنچ سی اِک مسلسل ہواؤں میں ہے
پھر سے غارت ہُوا ہے سکوں دشت کا
کھلبلی پھر نئی فاختاؤں میں ہے
آگ سی کیا یہ رگ رگ میں اُتری لگے
دھوپ کا سا گماں کیوں یہ چھاؤں میں ہے
میرے جینے کے اسباب سب شہر میں
میری تسکیں کا سامان گاؤں میں ہے
آج تک ہم نے بنتی تو دیکھی نہیں
بات ماجدؔ چھپی جو اناؤں میں ہے
ماجد صدیقی
Advertisements