ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 34
کب مہاجن نجانے بگڑنے لگیں
کب کھڑی کھیتیاں پھر اُجڑنے لگیں
منصفوں میں بھی ہے پھُوٹ یوں عدل پر
سوتنیں جیسے باہم جھگڑنے لگیں
کیا خبر مان لیں کیا، خداوند اور
کون سی بات پر آ کے اَڑنے لگیں
پھر نہ ماجد بدن زد پہ ژالوں کی ہوں
پھر نہ پہلی سے کھالیں اُدھڑنے لگیں
ماجد صدیقی
Advertisements