ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 27
شہر پہ جانے کس افتاد کی گھڑیاں آنے والی ہیں
خبروں پر مامور ہوئیں جتنی بھی زبانیں کالی ہیں
ساحل کو چھو لینے پر بھی سفلہ پن دکھلانے کو
دریاؤں نے کیا کیا موجیں اب کے اور اچھالی ہیں
گلیوں گلیوں دستک دیتے، امن کی بھیک نہ ملنے پر
دریوزہ گر کیا کیا آنکھیں، کیا کیا ہاتھ سوالی ہیں
اُس کا ہونا مان کے، اپنے ہونے سے انکار کریں
جابر نے کچھ ایسی ہی شرطیں ہم سے ٹھہرا لی ہیں
حرف و زبان کے برتاؤ کا ذمّہ تو کچھ میر ہی لیں
ہاں جو بایتں ہم کہتے ہیں وہ ساری ٹیکسالی ہیں
ماجد صدیقی
Advertisements