ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 37
خلق کو آتش نفس، آنکھوں کو نم دیکھا نہ تھا
اس سے پہلے شہر پر، ایسا ستم دیکھا نہ تھا
جھونپڑوں میں کب تھا ایسا، جاکنی کا سا خمار
چشمِ شاہاں میں ہے جو، وُہ کیف و کم دیکھا نہ تھا
جس طرح روندا گیا ہے، اَب کے شہر آرزو
اِس طرح ہوتے نگر کوئی بھسم دیکھا نہ تھا
تھی سکوں کی جنس اتنی بھی کبھی، ناپید کب
کُو بہ کُو اب کے ہے جیسا، حبسِ دم دیکھا نہ تھا
ریوڑوں نے کی نہ تھی، یُوں پاسبانی گُرگ کی
ظُلم کو ماجدؔ تحفّظ یُوں بہم، دیکھا نہ تھا
ماجد صدیقی
Advertisements